264

آرمی چیف چاہتے تو لفٹ کے ذریعے سیدھا ایوان میں جاتے لیکن انہوں نے ۔۔۔“سینئر صحافی حامد میر نے ایسی بات بتا دی کہ آپ بھی جنرل قمر جاوید باجوہ کو سلام پیش کریں گے

اسلام آباد سینئر صحافی اور معروف تجزیہ نگار حامد میر نے کہا ہے کہ آرمی چیف اگر چاہتے تو لفٹ کے ذریعے سیدھا سینیٹ کے ہال میں پہنچ جاتے لیکن وہ دستور گلی میں گئے جو کے سینیٹ کے ایوان سے دور ہے ۔نجی نیوز چینل جیو نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے حامد میر نے کہا کہ سینیٹ ہال کے راستے میں دستور گلی نہیں آتی لیکن آرمی چیف پھر بھی چیئر مین سینیٹ کے ساتھ دستور گلی گئے جس سے ثابت ہوتا ہے کہ یہ ایک شعوری فیصلہ تھا جس میں آرمی چیف کی رضامندی بھی شامل تھی ۔انہوں نے بتا یا کہ دستور گلی میں جمہوری تاریخ کو پینٹنگز اور دستا ویزات کی صورت پیش کیا گیا ہے اور وہاں چار حصے سیاہ ہیں جو کہ آمرانہ ادوار کی عکاسی کرتے ہیں ،اس کے علاوہ یہاں جمہوریت کے لیے قربانیاں دینے والوں کی تصا ویر بھی آویزاں ہیں ۔حامد میر نے کہا کہ آرمی چیف کی جانب سے دستور گلی میں جانے کا مطلب یہ ہے کہ وہ سب قربانیوں اعتراف کرتے ہیں ۔انہوں نے مزید کہا کہ گلی دستور میں جانے سے اداروں کے درمیان فاصلے کم ہونگے اور سول ملٹری تعلقات میں بہتری آئے گی جس سے پوری دنیا میں مثبت پیغام جائے گا ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں